کڑواہٹ سماعت میں رکاوٹ کا سبب ہے

ہر طرح کی تلخ مزاجی اور قہر(جنون، غصہ،غضب) آزردگی) اور غصّہ ( قہر،آزردگی) اور شوروغل (جھگڑا، شورشرابہ، تنازعہاور بدگوئی (بُری باتیں کرنا، گالی گلوچ یا ھتک آمیز زبانہر قِسم کی بدخواہی (بُرا چاہنا، ہر قسم کی منافقتسمیت تم سے دور کی جائیں۔                                      (افسیوں ۴ : ۳۱)

خُدا کے لئے کڑواہٹ یقینی طور پر اُس کی آواز سُننے میں رکاوٹ کا باعث ہے۔ جب بھی کڑواہٹ آپ پر قابض ہونے کی کوشش کرے اُس کا مقابلہ کریں۔ بہت دفعہ ابلیس ہمیں یہ سوچنے پر مجبور کردیتا ہے کہ صرف ہم مصیبت کا شکار ہیں۔ میں سخت دلی کا مظاہرہ نہیں کرنا چاہتی، لیکن چاہے ہمارے مسائل کتنے ہی بُرے کیوں نہ ہوں کسی اور کے مسائل ہم سے زیادہ بُرے ہوں گے۔

ایک خاتون جو خدمت میں میرے ساتھ تھی کے شوہر نے اُنتالیس سال کی شادی کے بعد اُس کو چھوڑدیا۔ اورمحض ایک پرچہ لکھ کررکھ دیا اورپھرچلا گیا۔ یہ اُس کے لئے ایک المناک حادثہ تھا! مجھے  اُس پر بہت فخر تھا کیونکہ کچھ ہفتہ گزرنے کے بعد وہ میرے پاس آئی اور کہا ’’جائیس برائے مہربانی میرے لئے دُعا کریں کہ میں خُدا سے ناراض نہ ہوں۔ ابلیس مجھے برے طریقہ سے آزما رہا ہے کہ میں اُس سے ناراض ہوجاوٗں۔ میں خُدا سے ناراض نہیں ہوسکتی۔ وہی تو میرا واحد دوست ہے۔ مجھے اُس کی ضرورت ہے!‘‘

کڑواہٹ میری دوست کے دِل میں گھر کرنا چاہ رہی تھی کیونکہ اس کی زندگی اس کی خواہش کے مطابق نہیں تھی۔ جب ہم زخمی ہوتے ہیں ہمارے لئے یہ جاننا ضروری ہےکہ ہرشخص کی آزاد مرضی ہے اور ہم اُس آزاد مرضی کو کنٹرول نہیں کرسکتے ۔۔۔۔۔۔ دُعا کے وسیلہ سےبھی نہیں۔ ہم یہ دُعا ضرورکرسکتے ہیں کہ خُدا اُن لوگوں کےساتھ کلام کرے گا جو ہمیں تکلیف پہنچا رہے ہیں؛ ہم اُس سے کہہ سکتے ہیں کہ وہ ان کوغلط کام کی بجائے اچھّا کام کرنے کی ہدایت کرے لیکن  آخرکار وہ خود اپنے عمل کےذمہ دار ہیں۔ اوراگر کوئی شخص ہمیں تکلیف پہنچانے کی کوشش کرتا ہے تو ہمیں اس کے عمل کا الزام خُدا پر نہیں دھرنا اور نہ اُس کےلئے اپنے دِل میں کڑواہٹ رکھنی ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آج آپ کے لئے خُدا کا کلام: اگرآپ زخمی ہوتے ہیں، کبھی بھی خُدا کو الزام نہ دیں۔ وہ آپ کا واحد اور بہترین دوست ہے۔

Facebook icon Twitter icon Instagram icon Pinterest icon Google+ icon YouTube icon LinkedIn icon Contact icon